بین الاقوامی خلائی اسٹیشن 2031 میں مدار بدر کرکے سمندر برد کیا جائے گا

ناسا نے کانگریس میں بین الاقوامی خلائی اسٹیشن (آئی ایس ایس) کے مستقبل کے متعلق تفصیلات پیش کردی ہیں۔

اس شاندار خلائی اسٹیشن کو 2031 میں مداربدر (ڈی آربٹ) کرکے بحرالکاہل کے ایک ویران مقام “پوائنٹ نیمو” پر گرادیا جائے گا۔ اگرچہ اس عمل میں فضائی رگڑ سے اس کا کچھ حصہ پہلے ہی جل کر راکھ بن چکا ہوگا۔ناسا نے اپنی رپورٹ میں کہا ہے کہ آئی ایس ایس کو اس کے مدار سے ہٹا کر زمین پردھکیلا جائے گا لیکن ایک اور راہ بتائی ہے جس کے تحت اس کا مدار مزید نیچے لاکر اسے نچلے ارضی مدار یعنی لو ارتھ آربٹ (ایل ای او) تک پہنچاکر نجی کاروباری کمپنیوں کے حوالے بھی کیا جاسکتا ہے۔ کانگریس نے ناسا سے آئی ایس ایس کے مفید ہونے کے متعلق اور اس کی بقیہ زندگی کے متعلق سوالات کئے تھے۔رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ اپنی ساخت، مٹیریئل، ریڈی ایٹر اور اسٹرکچر کی بنا پر خلائی اسٹیشن کی زندگی محدود ہے۔ ان میں لائف سپورٹ۔ پاور، اور ماحولیاتی کنٹرول کے نظام ایسے ہیں جو اب بھی خلا میں رہتے ہوئے مرمت کے قابل ہیں۔ لیکن بار بار ڈاکنگ اور دیگر خلائی جہازوں کے جڑنے سے اس کا بیرونی ڈھانچہ وقت کے ساتھ ساتھ متاثر ہوتا رہا ہے۔ناسا کے مطابق اگلے چند برسوں سے اس کا مدار زمین سے قریب رہ کر کھسکھایا جائے گا اور یوں 2030 تک 408 کلومیٹر بلندی سے 340 کلومیٹر تک لے جایا جائے گا۔ پھر اس کی حتمی صفائی اور جانچ کے بعد اسے 175 کلومیٹر کی بلندی سے ایک زوردار دھکا دیا جائے گا جہاں وہ زمین کا رخ کرے گا۔ Square Adsence 300X250

Leave a Reply

Your email address will not be published.

eight + eight =

Back to top button