لوگوں کی جاسوسی کرنے والے 7 گروپوں پر پابندی عائد

فیس بک اور میٹا کی مالک کمپنی میٹا نے100 سے زائد ممالک میں 50 ہزار کے قریب لوگوں کو نشانہ بنانے والے سات سرویلینس فار ہائر گروہوں پر پابندی عائد کر دی۔سرویلینس فار ہائر گروہ وہ گروہ ہوتے ہیں جو ذاتی مقاصد کے حصول کے لیے لوگوں کی جاسوسی کرتے ہیں اور معلومات اکٹھی کرتے ہیں۔کمپنی کے مطابق یہ ’سائبر گروہ‘ بلا امتیاز سبھی کی جاسوسی کر رہے تھے جن میں صحافی، باغی، آمرانہ حکومتوں کے نقاد، حزب اختلاف اور انسانی حقوق کے کارکن شامل ہیں۔میٹا نے مہینوں کی تحقیقات کے بعد سامنے آنے والی رپورٹ میں کہا عالمی جاسوسی انڈسٹری کا حصہ یہ گروہ اپنے گاہکوں کو دخل اندازی کرنے والے سافٹ ویئر اور جاسوسی کی خدامات فراہم کرتے ہیں جس سے انٹرنیٹ پر کہیں بھی لوگوں کے متعلق معلومات اکٹھا کی جا سکتی ہے، انہیں گمراہ کیا جا سکتا ہے اور ان کی ڈیوائسز اور اکاؤنٹس کو قابو میں لیا جا سکتا ہے۔فیس بک میں سیکیورٹی پالیسی کے ہیڈ نیتھنیل گلیشر نے ٹوئٹ کیا کہ کمپنی 7 گروہوں کے کے خلاف کارروائی کر رہی ہے جنہوں نے جاسوسی کے لیے جعلی اکاؤنٹ استعمال کرتے ہوئے، میل ویئر بھیج کر اور دیگر طریقوں سے دنیا بھر میں لوگوں ہدف بناتے ہوئے شناخت کیا گیا ہے۔2/ We’re implementing in opposition to 7 entities we recognized as systemically utilizing pretend accounts to focus on folks throughout our platform and the broader web, in addition to sending malware and taking different steps to spy on their targets.

— Nathaniel Gleicher (@ngleicher) (*7*) 16, 2021

سائبر جاسوسی کے عمل کے مراحل بتاتے ہوئے میٹا نے کہا کہ پہلا مرحلہ تحقیقات کا ہوتا ہے جہاں یہ گروہ خفیہ طور پر اپنے گاہکوں کے لیے اپنے اہداف کی پروفائل کا جائزہ لیتے ہیں۔ یہ ایک ایسا مرحلہ ہوتا ہے جہاں ہدف کو بھنک بھی نہیں پڑتی۔میٹا کی جانب سے سامنے آنے والی رپورٹ کے مطابق اس مرحلے میں گروہ انٹرنیٹ سے ڈیٹا جمع کرنے کے لیے سافٹ ویئر کا استعمال کرتے ہیں، تمام تمام میسر آن لائن ریکارڈ سے اہم معلومات کھینچ کر لاتے ہیں۔دوسرے مرحلے میں اہداف سے یا ان کے قریبی لوگوں سے رابطہ کیا جاتا۔ یہ گروہ اعتبار بڑھاتے اور دھوکے سے نقصان دہ لنک پر کلک کرا لیتے۔آخری مرحلے میں یہ گروہ اپنے اہداف کو ان کی حساس معلومات جیسے کہ ای میل ایڈریس، سوشل میڈیا اکاؤنٹ یا بینک اکاؤنٹ وغیرہ کی معلومات حاصل کرنے کے لیے مزید جھانسہ دیتے لنک پر کلک کرا لیتے تاکہ ان کی ڈیوائسز کو اپنے قابو میں لے سکیں۔میٹا کا کہنا تھا کہ تمام پلیٹ فارمز پر سائبر مجرمان سے لوگوں کو بچانے کے لیے پلیٹ فارمز، پالیسی سازوں اور سول سوسائیٹی کی جانب سے مشترکہ اقدامات کرنے ہوں گے۔ Square Adsence 300X250

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

Back to top button