چین کی ’ارتھ 2.0‘ مشن کی تیاری

چین زندگی کے آثار رکھنے والے سیاروں کی تلاش کے لیے اپنے ’ارتھ 2.0‘ نامی مشن کی تیاری کر رہا ہے۔

یہ اسپیس کرافٹ اپنے ابتدائی ڈیزائن کی تکمیل کے حتمی مراحل میں ہے۔ اگر یہ جون میں ماہرین کے پینل کی جانب سے ریویو میں پاس ہوجاتا ہے تو اس کو 2026 کی آخر تک اس کو بنا کر لانچ کیا جا سکتا ہے۔سائنس دانوں کی جانب سے اس مہینے کے آخر میں اس اسپیس کرافٹ کے متعلق تفصیلات جاری کی جائیں گی لیکن کچھ معلومات ابھی بھی سامنے ہیں۔ارتھ 2.0 مشن میں سات ٹیلی اسکوپس ہوں گی جو چار سالوں تک خلاء کی گہرائیوں میں دیکھیں گی۔چھ دور بینیں سائگنس-لائرا نامی ستاروں کی جھرمٹ کا مشاہدہ کریں گی، جن کو کیپلر ٹیلی اسکوپ پہلی دیکھ رہی ہے۔اس اسپیس کرافٹ سے پُرانی جگہوں کے مطالعے کے بجائے نظامِ شمسی سے باہر موجود نئے سیاروں کو ڈھونڈا جائے گا، جو اس قابل ہوں گی کہ وہاں زندگی آباد کی جا سکے۔چائینیز اکیڈمی آف سائنسز کی شینگھائی آسٹرونومیکل آبزرویٹری میں ارتھ 2.0 مشن کی سربراہی کرنے والے ماہرِ فلکیات جیان گی کا کہنا تھا کہ کیپلر فیلڈ زمین سے لگتی شاخوں پر موجود پھل کی مانند ہے، کیوں کہ اس سے ہمیں بہترین ڈیٹا ملا ہے۔ Adsence Ads 300X250

Source

Leave a Reply

Your email address will not be published.

4 − one =

Back to top button