ہم نے آئین کی تشریح آج کے لیے نہیں آنے والی نسلوں کے لیے کرنی ہے، سپریم کورٹ

چیف جسٹس آف پاکستان عمرعطا بندیال نے کہا ہے کہ ہم نے آئین کی تشریح آج کے لیے نہیں آنے والی نسلوں کے لیے کرنی ہے۔ آئین ایک زندہ دستاویزہے۔سپریم کورٹ میں آئین کے آرٹیکل 63 اے کی تشریح سے متعلق صدراتی ریفرنس پرسماعت ہوئی۔ چیف جسٹس عمر عطا بندیال کی سربراہی میں سپریم کورٹ کے پانچ رکنی بنچ نے کیس کی سماعت کی۔چیف جسٹس پاکستان نے ریمارکس دیے کہ ریفرنس اور آئینی درخواست عدالت کے سامنے ہیں۔ مخدوم علی خان کی التوا کی درخواست بھی آئی ہے۔ مخدوم علی خان 15 مئی کی شام وطن واپس آئیں گے۔ اتنا انتظار کرنا ممکن نہیں انہیں جلد آنے کی درخواست کرتے ہیں۔چیف جسٹس عمرعطابندیال نے کہا کہ بابراعوان کے بعد اظہر صدیق کا بھی مؤقف سنیں گے۔ عدالت ریفرنس میں پوچھے گئے سوالات کا جوابات دینا چاہتی ہے۔ صدارتی ریفرنس میں 63 اے کی تشریح کا کہا گیا ہے۔ قانونی سوال پر عدالت اپنی رائے دینا چاہتی ہے۔جسٹس اعجازالاحسن نے کہا کہ سوال صرف آرٹیکل 63 اے کی تشریح کا ہے۔ تشریح وفاق پرلاگو ہو یا صوبوں پر یہ ہمارا مسئلہ نہیں۔ عدالت کی جو بھی رائے آئے گی تمام فریق اس کے پابند ہوں گے۔وکیل ق لیگ اظہرصدیق نے کہا کہ سینٹ الیکشن پرعدالتی رائے کا احترام نہیں کیا۔ایڈیشنل اٹارنی جنرل نے کہا کہ نئے اٹارنی جنرل بھی اپنی رائے دینا چاہتے ہیں۔ 63 اے کے تحت نااہلی ریفرنس الیکشن کمیشن میں زیرالتواء ہے۔ الیکشن کمیشن سے ایک فریق سپریم کورٹ اپیل میں آئے گا۔چیف جسٹس نے کہا کہ آئین کا تحفظ ہمارا فرض ہے، آرٹیکل 63 اے کی تشریح کریں گے۔ پارلیمانی جمہوریت کے لیے آرٹیکل 63 اے کی تشریح ضروری ہے۔ ازخودنوٹس کسی کے کہنے پر نہیں بلکہ بنچ کی مرضی سے لیا جاتا ہے۔اسپیکر رولنگ پر ازخودنوٹس کیوں لیا، چیف جسٹس نے کھلی عدالت میں بتا دیاچیف جسٹس پاکستان عمرعطابندیال نے کہا کہ ہم نے کسی کی خواہش پرازخود نوٹس نہیں لینا ہوتا۔ ازخود نوٹس پہلے ایک بنچ کی سوچ ہوتی ہے اور پھر معاملہ چیف جسٹس تک جاتا ہے۔ جو آخری ازخود نوٹس سپریم کورٹ نے لیا اس پر 12 ججز نے پہلے مشاورت کی تھی۔ سب کی رائے تھی کہ یہ آئینی معاملہ ہے اس پر ازخود نوٹس لینا چاہیئے۔وکیل بابر اعوان نے کہا کہ آئینی بحث میں عدالت کی معاونت کروں گا۔ عدالت کا بڑا ادب اور احترام ہے۔جسٹس جمال خان مندوخیل نے کہا کہ آپ کی ادب کی بات کی قدر کرتے ہیں۔ کاش یہ ادب احترام لوگوں میں بھی پھیلائیں۔بابراعوان نے کہا کہ اس کام کیلئے وزارت اطلات ہے۔’عدالت رات کو بھی کھلتی ہے‘جسٹس جمال خان مندوخیل نےکہا کہ لوگوں کو بتائیں کہ عدالت رات کو بھی کھلتی ہے۔ بلوچستان ہائیکورٹ رات ڈھائی بجے بھی کھلی۔وکیل بابراعوان نے کہا کہ اس بحث میں نہیں جانا چاہیے۔ وکالت میں اس سے مشکل حالات بھی دیکھے ہیں ۔ آرٹیکل 63 اے اور 62 کو ملا کر پڑھا جائے۔چیف جسٹس نے کہا کہ منحرف ارکان کیخلاف الیکشن کمیشن میں ریفرنس فائل ہو چکے ہیں۔ نا اہلی ریفرنس کے باوجود قانونی سوال اپنی جگہ پرموجود ہے۔ آرٹیکل 63 اے آئین کا حصہ ہے۔ الیکشن کمیشن میں نا اہلی ریفرنس کے باوجود آرٹیکل 63اے کی تشریح کرسکتے ہیں۔عدالت نے کہا کہ سپریم کورٹ آرٹیکل 63اے کی تشریح کرے گی۔ پارلیمانی جمہوریت کے لیے آرٹیکل 63اے کی تشریح کا سوال بڑا اہم ہے۔جسٹس جمال خان مندوخیل نے کہا کہ کیا الیکشن کمیشن انحراف پر کسی رکن کو جھوٹا اور بددیانت قراردے سکتا ہے؟وکیل بابراعوان نے کہا کہ الیکشن کمیشن کا اختیار ہے کہ کسی رکن کو بدیانت یا ایماندار قراردے سکے۔ پاکستان کے سب سےبڑے صوبے میں اراکین اسمبلی نے کھلے عام دوسری جماعت کو ووٹ دیے۔جسٹس اعجازالاحسن نے کہا کہ اگرمخلوط حکومت میں اراکین دوسری جماعت کو ووٹ دیں تو وہ بھی انحراف ہوگا؟جسٹس جمال خان نے کہا کہ کیا نااہلی صرف ایک پارلیمانی جماعت سے دوسری میں جانے سے ہی ہوتی ہے؟ اگر کوئی ایک حلقے سے منتخب ہو اور قانون سازی سے اسی حلقے کا نقصان ہو تو کیا وہ رکن رو کر چپ ہو جائے؟تحریک انصاف کے وکیل نے دلائل میں کہا کہ جو پارٹی کے نام پر جیت کر آئے اور لگے غلط جگہ پھنس گیا ہے تو استعفیٰ دے دے۔جسٹس اعجازالاحسن نے کہا کہ اگراپنی جماعت کے خلاف جانا باضمیرہونا ہے تو بھی استعفی ہی دینا چاہیے۔بابراعوان نے کہا کہ پاکستان میں استعفے دباؤ میں آکر بھی دیے گئے اور مرضی سے بھی۔ تحریک انصاف کے اراکین کسی اور کو ووٹ دے کر ابھی تک جماعت سے منسلک ہیں۔جسٹس جمال خان نے کہا کہ سیدھا سوال ہے انحراف پر ڈی سیٹ ہونے کے ساتھ نااہلی کی سزا ہونی چاہیے یا نہیں۔ انحراف پر ڈی سیٹ ہونے کا جو جرمانہ دیا گیا کیا عدالت اس کو بڑھا سکتی ہے؟وکیل پی ٹی آئی نے کہا کہ یہ صورتحال اور کیس پہلی بارعدالت کے سامنے آیا ہے۔ اس کے لیے پنڈورا باکس کھول کر اندر سے ہی دیکھنا ہوگا۔’آئین ایک زندہ دستاویزہے‘چیف جسٹس پاکستان نے کہا کہ ہم نے آئین کی تشریح آج کے لیے نہیں آنے والی نسلوں کے لیے کرنی ہے۔ آئین ایک زندہ دستاویزہے۔ آرٹیکل 63اور 64 دونوں میں سیٹ خالی ہوجاتی ہے لیکن دونوں ایک نہیں ہیں۔ ہم نے آئین کی ان شقوں کے مقصد تک پہنچنا یے۔چیف جسٹس عمرعطابندیال نے کہا کہ ہم نے آئین کے اصولوں کو دیکھنا انفرادی طور پر لوگوں کے عمل کونہیں۔ سپریم کورٹ کو 25 منحرف اراکین سے کوئی غرض نہیں۔ آپ کے مؤکل کو سینٹ انتخابات سے متعلق عدالتی رائے پر عملدرآمد نہ ہونے پر تشویش ہے تو درخواست کیوں نہیں دی؟عدالت نے کہا کہ محترم عدالت اور ایگزیکٹو کے فنکشنز میں فرق ہوتا ہے۔ عدالت واقعہ کے رونما ہونے کے بعد فیصلہ کرتی ہے کہ ٹھیک ہوا یا غلط۔ ریکوڈک کے معاملے پر ججز کے سامنے کتنے شواہد آئے تھے مخدوم علی خان کو معلوم ہے۔چیف جسٹس پاکستان نے کہا کہ ازخود نوٹس کے اثرات کی مثال دی جاتی ہے۔ ریکوڈک میں ایگزیکٹو اپنی ذمہ داری پوری کرنے میں ناکام ہوئی۔ اگرکوئی معاملہ عدالت کے سامنے لانا چاہتے ہیں تو درخواست دیں۔وکیل تحریک انصاف نے کہا کہ سینٹ الیکشن سے متعلق صدارتی رائے پرعملدرآمد میرے مؤکل کی نہیں الیکشن کمیشن کی کوتاہی ہے۔چیف جسٹس پاکستان نے کہا کہ سینٹ الیکشن سے متعلق ایک درخواست دکھا دیں آپ کی جماعت کی طرف سے آئی ہو۔جسٹس اعجازالاحسن نے کہا کہ یہ بات سوچیں کے یہ سپریم کورٹ آف پاکستان ہے اور تمام متاثرہ فریقین نے اسی کے سامنے آنا یے۔بابراعوان نے کہا کہ ہائی کورٹ نے صدر سے متعلق تضحیک آمیز ریمارکس دیے صدر خاموش رہے۔’صدر سے متعلق ریمارکس اگر درست نہیں تو درخواست دیں‘چیف جسٹس پاکستان نے کہا کہ صدر سے متعلق ریمارکس اگر درست نہیں تو درخواست دیں۔سپریم کورٹ نے تحریک انصاف کی آئینی درخواست پر بھی فریقین کو نوٹس جاری کرتے ہوئے کیس کی سماعت کل تک ملتوی کر دی۔وکیل ق لیگ اظہر صدیق نے کہا کہ افواہ ہے کہ وفاقی حکومت نئے اٹارنی جنرل کی تعیناتی کے بعد صدارتی ریفرنس واپس لے لے گی۔چیف جسٹس عمرعطا بندیال نے کہا کہ یقین ہے کہ وفاقی حکومت ریفرنس کی اہمیت سے واقف ہوگی۔ وفاقی حکومت ریفرنس کی تشریح کے راستے میں نہیں آئے گی۔ مزید پڑھیں2 minutes agoعمران خان کی وجہ سےدوست ممالک ہم سے ناراض ہیں، حمزہ شہباز

حمزہ شہباز نے کہا ہے کہ عمران خان کی وجہ سےدوست ممالک…

21 minutes agoالیکشن کمیشن تمام جماعتوں کی اسکروٹنی کرے، فرخ حبیب

فرخ حبیب نے کہا ہے کہ الیکشن کمیشن تمام جماعتوں کی اسکروٹنی…

28 minutes agoکورونا سے سب سے زیادہ نقصان تعلیم کا ہوا ہے، شہرام ترکئی

شہرام ترکئی نے کہا ہے کہ کورونا سے سب سے زیادہ نقصان…

39 minutes agoحکومت سے حالات نہیں سنبھل رہے، حماد اظہر

حماد اظہر نے کہا ہے کہ حکومت سے حالات نہیں سنبھل رہے۔…

48 minutes agoکورنگی کے چاروں زون آج سے فعال ہو جائیں گے، مرتضیٰ وہاب

مرتضیٰ وہاب نے کہا ہے کہ کورنگی کے چاروں زون آج سے…

54 minutes agoفواد چوہدری کا مریم نواز کے بیان پر معافی مانگنے کا مطالبہ

فواد چوہدری نے مریم نوازکے بیان پرمعافی مانگنے کا مطالبہ کیا ہے۔…

تازہ ترین نیوز پڑہنے کے لیے ڈاؤن لوڈ کریں بول نیوزایپ

General Rectangle – 300×250

Source

Leave a Reply

Your email address will not be published.

eight − 3 =

Back to top button