یو اے ای اور روس کے درمیان ہائیڈروجن فیول ٹیکنالوجی میں تعان کےلیے معاہدہ

متحدہ عرب امارات اور روس کے درمیان ہائیڈروجن فیول ٹیکنالوجی میں تعاون کےلیے معاہدہ طے پاگیا۔

غیر ملکی خبررساں ادارے کے مطابق متحدہ عرب امارات کی وزارت صنعت اور جدید ٹیکنالوجی نے ہائیڈروجن فیول ٹیکنالوجی میں صنعتی تعاون کو تقویت دینے کے لیے روس کی وزارت صنعت و تجارت کے ساتھ مفاہمت کی ایک یادداشت پر دستخط کیے ہیں۔ابوظہبی انٹرنیشنل پیٹرولیم نمائش اور کانفرنس (ADIPEC 2021) کے 37ویں ایڈیشن کے موقع پر متحدہ عرب امارات کے صنعت اور جدید ٹیکنالوجی کے وزیر ڈاکٹر سلطان احمد الجابر اور روسی وزیر صنعت و تجارت ڈینس مانتوروف نے اس معاہدےپر دستخط کیے ۔اس معاہدے کے تحت پائیدار اور کم یا اخراج سے پاک توانائی کے ذرائع تیار کرنے، اس کی مسلسل نمو کو یقینی بناتے ہوئے کاربن نیوٹرل صنعتی شعبے کو حاصل کرنے، ہائیڈروجن ایندھن کی پیداوار،اسٹورج اور نقل و حمل میں مشترکہ حل تلاش کیے جائیں گے۔ڈاکٹر سلطان الجابر نے کہا یہ معاہدہ ہماری قیادت کے پائیدار ترقی کی حمایت میں نئے بین الاقوامی تعاون کو مضبوط بنانے کےاسٹریٹجک وژن کے مطابق ہے اور ہائیڈروجن ایندھن پر روس میں صنعت اور تجارت کی وزارت کے ساتھ کام کرنا ہماری قوموں کی تکمیل کرتا ہے۔انہوں نے کہا معاہدہ دیرینہ تعلقات، توانائی کے صاف اور پائیدار ذرائع تلاش کرنے کے لیے نئی ہدایات کی عکاسی کرتا ہے۔خصوصاً جب عالمی معیشت COVID-19 کے اثرات سے نکل رہی ہے۔اماراتی وزیر نے کہایہ تعاون متحدہ عرب امارات اور روس کے درمیان موجود مضبوط شراکت داری کو تقویت دیتا ہے۔خصوصاً صنعت، انفارمیشن ٹیکنالوجی، انفراسٹرکچر، پیٹرو کیمیکلز اور توانائی جیسے ترجیحی شعبوں پر توجہ مرکوز کرنے والی دو طرفہ سرمایہ کاری جو ہائیڈروجن ایندھن کی بنیاد ہیں۔انہوں نے کہاکم اخراج والے توانائی کے ذرائع کی ضرورت کو تسلیم کرتے ہوئےہائیڈروجن توانائی صنعت کے مستقبل میں کافی تبدیلی پیدا کرے گی۔ڈاکٹر سلطان الجابر نے کہامتحدہ عرب امارات ہائیڈروجن ایندھن میں کئی اسٹریٹجک فوائد پیش کرتا ہے جن میں گیس کے وسائل، شمسی اور ہوا سے صاف بجلی جیسے قابل تجدید ذرائع شامل ہیں۔انہوں نے مزیدکہا یہ انرجی سیکٹر کی ویلیو چین میں اپنی صلاحیتوں کو آگے بڑھانے اوربین الاقوامی معیارات کو قائم کرنے کے لیے روسی ہم منصب کے ساتھ تعاون کے ذریعے معیاری انفراسٹرکچر میں متحدہ عرب امارات کی پوزیشن کو مضبوط کرنے کا ایک اہم موقع فراہم کرتا ہے۔انہوں نے کہا متحدہ عرب امارات نے اپنی ہائیڈروجن کی پیداوار میں اہم پیشرفت کی ہے جو کہ ADNOC کی زیریں سہولیات کے ذریعے سالانہ تقریباً 300,000 ٹن تک پہنچ گئی ہے۔انہوں نے کہا ادنوک، مبادلہ اور اے ٹی کیو نے ابوظہبی ہائیڈروجن الائنس قائم کیا تاکہ متحدہ عرب امارات کے بڑے شعبوں میں ہائیڈروجن کو اپنانے اور استعمال میں تیزی لانے کے لیے ایک روڈ میپ تیار کیا جا سکے ایک اور اہم اقدام دبئی کے محمد بن راشد آل مکتوم سولر پارک میں گرین ہائیڈروجن پراجیکٹ ہےجو میناکے علاقے میں اپنی نوعیت کا پہلا منصوبہ ہے۔انہوں نے کہا کہ یہ DEWA، Expo 2020 Dubai اور Siemens Vitality کے اشتراک سے تیار کیا گیا ہے۔روسی وزیر صنعت و تجارت ڈینس مانتوروف نے کہاتجارتی اور اقتصادی تعلقات کو مضبوط بنانے کے لیے باہمی کوششوں سے مشترکہ صنعتی منصوبوں کی ترقی ممکن ہو تی ہےجس میں ہائیڈروجن توانائی بھی شامل ہے۔انہوں نے کہا روس اور متحدہ عرب امارات کے درمیان تعاون کی اہم صلاحیت ہائیڈروجن کو مائع بنانے، ذخیرہ کرنے ،نقل و حمل کے لیے سازوسامان کے ڈیزائن اور پروڈکشن میں ملٹی ویکٹر تعاون کے ساتھ ساتھ بین الاقوامی ترقی اور خطےمیں قومی معیارات کی ہم آہنگی بھی پائی جاتی ہے۔روسی وزیر نے کہا آج کا معاہدہ کم کاربن لیکن توانائی سے بھرپور اور عالمگیر تکنیکی حل تلاش کرنے کی عالمی اہمیت کو مدنظر رکھتے ہوئےکیا گیا ہے ہم نے متحدہ عرب امارات کے ساتھیوں کو کم کاربن اور کاربن سے پاک ہائیڈروجن اور امونیا کے روسی منصوبوں کا اٹلس بھی پیش کیا ہے جس کے پاس پہلے ہی پورے روس میں41 منصوبے ہیں۔ڈینس مانتوروف نے کہاکہ وزارتوں کے درمیان یہ معاہدہ بین الاقوامی علم اور ٹیکنالوجی کے تبادلے کے ذریعے ہائیڈروجن سیکٹر کو ترقی دینے کے امید افزا مواقع پیش کرے گا اور مشترکہ پیشرفت،ڈیٹا اور تجزیہ کے تبادلے کو فروغ دے گا۔ Sq. Adsence 300X250

Leave a Reply

Your email address will not be published.

five × two =

Back to top button